Uncategorized

والدہ نے فون پر کہا تھا آج تم سنچری بناؤ گے‘: فواد عالم

پاکستان اور ویسٹ انڈیز کے درمیان کنگسٹن کے سبینا پارک میں کھیلے جا رہے دوسرے ٹیسٹ کے تیسرے دن فواد عالم کی شاندار سنچری اور شاہین آفریدی کی عمدہ بولنگ کی بدولت پاکستانی ٹیم نے میچ میں اپنی پوزیشن انتہائی مضبوط کر لی ہے۔

پاکستان نے اپنی پہلی اننگز 302 بنا کر نو وکٹوں کے نقصان پر ڈکلیئر کر دی اور اس کے جواب میں کھیل کے اختتام تک ویٹس انڈیز نے تین وکٹوں کے نقصان پر 39 رنز بنائے ہیں۔

اس وقت کریز پر ویسٹ انڈیز کی جانب سے نکروما بونر اور الزاری جوزف موجود ہیں۔ بونر نے اب تک 18 رنز بنائے ہیں جبکہ جوزف کا سکور ابھی صفر ہے۔

ویسٹ انڈئز کی اننگز کا آغاز ہوا تو چوتھے اوور میں ہی اوپنر کائرن پوول شاہین شاہ آفریدی کی گیند پر ایل بی ڈبلیو ہوگئے۔ اس وقت ویسٹ انڈیز کا مجموعی سکور آٹھ تھا۔

تاہم صرف نو رنز کے مجموعی سکور پر شاہین آفریدی نے دوسرے اوپنر کریگ براتھ وائٹ کو بولڈ کر دیا۔

اس کے بعد ویسٹ انڈیز نے محتاط انداز میں بیٹنگ کرنا شروع کر دی۔ تاہم 14ویں اوور میں فہیم اشرف نے پاکستان کو تیسری وکٹ دلوائی جب انھوں نے 34 کے مجموعی سکور پر راسٹن چیس کو آؤٹ کر دیا۔ چیس 10 رنز بنا پائے تھے۔

تیسرے دن کے کھیل کا جب آغاز ہوا تو بارش کی وجہ سے میچ کو متعدد بار روکا گیا۔ کھانے کے وقفے کے بعد جب میچ دوبارہ شروع ہوا تو پاکستان نے اپنے گذشتہ روز کے سکور 212 چار کھلاڑی آوٹ سے اننگز شروع کی۔ محمد رضوان 22 اور فہیم اشرف 23 رنز پر موجود تھے۔

مگر صرف چھ رنز کے اضافے کے بعد 218 پر فہیم اشرف پویلین لوٹ گئے۔ انھوں نے 26 رنز بنائے تھے۔ فہیم اشرف کے جانے کے بعد فواد عالم جو کہ گذشتہ روز 76 کے افرادی سکور پر ریٹائرڈ ہو کر لوٹ گئے تھے میدان میں واپس اتر آئے

231 کے سکور پر پاکستان کو دہرا نقصان اٹھانا پڑا جب دو گیندوں میں محمد رضوان اور نعمان علی آؤٹ ہوگئے۔

تاہم فواد عالم نے سکور بورڈ کو رکنے نہیں دیا اور اس دوران انھوں نے اپنے ٹیسٹ کریئر کی پانچویں سنچری مکمل کی۔

حسن علی نو کے سکور پر رن آؤٹ ہوئے اور شاہین شاہ آفریدی 19 رنز بنا سکے۔ 302 کے سکور پر پاکستان نے اپنی اننگز ڈکلیئر کر دی۔

میچ کا دوسرا دن مکمل طور پر بارش کی نزر ہو گیا تھا۔ اس سے قبل پہلے روز پاکستان نے چار وکٹوں کے نقصان پر 212 رنز بنائے تھے۔ اس میچ میں میزبان ٹیم نے ٹاس جیت کر پاکستان کو بیٹنگ کی دعوت دی تو پاکستانی اوپنرز کا آغاز بالکل اچھا نہیں تھا۔

پاکستان کی پہلی وکٹ دو کے سکور پر گری جب عابد علی ایک رن بنا کر کیمار روچ کی گیند پر کیچ آؤٹ ہوگئے۔

دو کے ہی مجموعی سکور پر کیمار روچ نے اظہر علی کو بھی آؤٹ کر دیا۔ اظہر علی کوئی رنز نہیں بنا سکے۔

اس کے بعد ابھی پاکستان کا مجموعی سکور دو ہی تھا تو دوسرے اوپنر عمران بٹ بھی آؤٹ ہوگئے۔ عمران بٹ نے ایک رن بنایا تھا۔

اس بدترین آغاز کے بعد کپتان بابر اعظم اور فواد عالم نے آ کر ٹیم کو سنبھالا۔ ان دونوں کے درمیان 158 رنز کی شراکت ہوئی۔

160 کے مجموعی سکور پر فواد عالم 76 رنز بنانے کے بعد اپنی ٹانگ میں تکلیف کے باعث ریٹائرڈ ہو کر پویلین لوٹ گئے۔

تاہم فواد عالم کے جانے کے بعد بابر اعظم بھی زیادہ دیر کریز پر نہ رک سکے۔ وہ 75 رنز بنا کر کیمار روچ کی گیند پر کیچ آؤٹ ہوگئے۔ اس وقت تک پاکستان کا مجموعی سکور 168 ہو چکا تھا۔

’فواد عالم کے ضائع ہونے والے کئی سال‘

تیسرے دن فواد عالم کی شاندار سنچری کے بعد بہت سے سوشل میڈیا صارفین نے اس بات کو اجاگر کیا کہ فواد عالم کو کئی سال تک بہترین ڈومسٹک ریکارڈ کے باوجود ٹیم میں جگہ نہیں دی گئی تھی۔

کرکٹ کومنٹیٹر زینب عباس نے لکھا کہ فواد عالم سلیکشن میں سیاست کی وجہ ضائع ہوئے سالوں کو پورا کرنا چاہتے ہیں اور وہ یہ بہترین انداز میں کر رہے ہیں، بلے کے زبانی۔

۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button