سیاست

موسمیاتی تبدیلی کے لیےپاکستان میں 23 قومی پارک قائم

فیصل آباد: وزیر مملکت برائے موسمیاتی تبدیلی زرتاج گل نے جمعرات کو کہا کہ آب و ہوا کی تبدیلی پر قابو پانے کے لیے ایک ارب درخت لگانے کے علاوہ ملک میں 23 قومی پارک قائم کیے گئے ہیں۔

کمال پور انٹر چینج سرگودھا روڈ فیصل آباد کے قریب کالاش پارک کی افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ پاکستان کو موسمیاتی تبدیلی کے بدترین اثرات کا سامنا ہے جو نہ صرف درجہ حرارت میں اضافہ کر رہا ہے بلکہ ماحولیاتی نظام کو بھی بری طرح متاثر کر رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم عمران خان نے وقت پر اس مسئلے کا نوٹس لیا اور ملک میں 10 ارب سونامی ٹری پروگرام شروع کرکے اسے ترجیح دی۔

انہوں نے کہا کہ پی ایم خان ماحولیاتی تبدیلی کے حوالے سے عالمی رہنما کے طور پر ابھرے ہیں کیونکہ انہوں نے پاکستانیوں اور عالمی برادری کو ماحولیاتی تبدیلی پر قابو پانے کے لیے زیادہ سے زیادہ درخت لگانے کی ترغیب دی ہے۔

پاکستان کے قومی پارک موسمیاتی تبدیلی زرتاج گل کالاش پارک
انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم خان نے ملک کو ترقی اور خوشحالی کے صحیح راستے پر ڈال دیا ہے اور عوام جلد ہی قومی ترقی کے ثمرات حاصل کریں گے۔

زرتاج گل نے کہا کہ حکومت نے ماحولیاتی خطرات کے اثرات کو کم کرنے کے لیے ای گاڑیاں بھی متعارف کرائی ہیں جبکہ ریچارج پاکستان پروگرام کے تحت بنجر زمینیں ہل کے نیچے ہیں۔ اسی طرح ، ضلعی انتظامیہ کو بھی ماحول دوست پالیسیاں اپنانے اور صاف اور سبز پروگرام کے تحت زیادہ سے زیادہ درخت لگانے کے لیے فعال کیا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ تمام اینٹوں کے بھٹوں کو ماحولیاتی آلودگی پر قابو پانے کے لیے زگ زگ ٹیکنالوجی میں تبدیل کیا جا رہا ہے تاہم اس پروگرام کے مطلوبہ نتائج حاصل کرنے کے لیے عوامی تعاون ضروری ہے۔

انہوں نے کہا کہ عمران خان پاکستان کی تاریخ کے پہلے وزیراعظم تھے جنہوں نے اپنی کارکردگی کے ذریعے لوگوں کو اعتماد میں لیا۔ صرف پی ٹی آئی حکومت نے بھارتی غیر قانونی مقبوضہ جموں و کشمیر (آئی آئی او جے کے) میں ظلم اور بربریت کے خلاف موثر انداز میں آواز بلند کی تھی۔

انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم نے اقوام متحدہ سمیت تمام بین الاقوامی فورمز پر اپنے مظالم کو اجاگر کرتے ہوئے مودی حکومت کے بدصورت چہرے کو بے نقاب کیا۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان نے واضح موقف اپنایا کہ وہ کسی جنگ کا حصہ نہیں بنے گا بلکہ وہ افغانستان میں امن عمل کی حمایت کرے گا۔ وزیراعظم نے تباہ کن مقاصد کے لیے ایئربیس دینے سے بھی صاف انکار کر دیا تھا۔

انہوں نے کہا کہ ماضی کی حکومتوں نے عوام کا پیسہ صرف سڑکوں ، پلوں اور عمارتوں پر ضائع کیا تھا لیکن وزیراعظم عمران خان نے اسے عوام پر خرچ کرنے کا منصوبہ بنایا تھا اور اس سلسلے میں احساس پروگرام غریبوں ، بیواؤں ، مزدوروں ، کسانوں کی مدد کے لیے شروع کیا گیا تھا۔ معذور افراد جبکہ پورے پیسے کی تقسیم کے نظام کو کمپیوٹرائزڈ کر دیا گیا تاکہ شفافیت کو یقینی بنایا جا سکے تاکہ اس سے بدعنوانی کا خاتمہ ہو سکے۔

انہوں نے کہا کہ احساس پروگرام کی 30 فیصد رقم سندھ میں خرچ کی جا رہی ہے کیونکہ اس صوبے کے لوگ انتہائی ناقص حالات میں زندگی گزار رہے ہیں کیونکہ اس کے حکمرانوں کی غلط پالیسیوں اور بدعنوانیوں کی وجہ سے

انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی حکومت نے کسانوں کو زرعی شعبے میں انقلاب لانے کے لیے کسان کارڈ جاری کیے ہیں ، جبکہ غریب لوگوں کو صحت کارڈ جاری کیے گئے ہیں تاکہ وہ صحت کی معیاری سہولیات حاصل کرسکیں۔

وزیر اعظم نے امیر اور غریب کے درمیان فرق کو دور کرنے کے لیے ’ایک قوم ایک نصاب‘ بھی متعارف کرایا جو ملک میں ایک قوم کی ترقی میں بھی مددگار ثابت ہوگا۔

اس موقع پر صوبائی وزیر کالونیاں میاں خیال احمد کاسترو ، ڈپٹی کمشنر (ڈی سی) محمد علی اور دیگر وزیر بھی موجود تھے۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button