Uncategorized

کورنگی آتشزدگی واقعہ، بیٹے کی لاش دیکھ کر باپ چل بسا

باپ 22 سالہ نوجوان کو اسپتال دیکھنے گیا،بیٹے کی جھلسی ہوئی لاش دیکھ کر دل کا دورہ پڑ گیا

گذشتہ روز کراچی کے علاقے کورنگی مہران ٹان میں کیمیکل فیکٹری میں آگ لگنے کا افسوسناک واقعہ پیش آیا جس نے کئی گھر اجاڑ دئیے ۔آتشزدگی کے باعث 17مزدور موقع پر ہی جھلس کر جاں بحق ہوگئے۔پولیس حکام کا کہنا ہے کہ فیکٹری عملہ کے مطابق اندر پچیس کے قریب لوگ موجود تھے۔ریسکیو ذرائع کا کہنا ہے کہ ہلاکتوں کی تعداد بیس سے زائد ہونے کا امکان ہے۔
ڈپٹی کمشنر کورنگی نے کہا ہے کہ فیکٹری میں آگ لگنے کے واقعے میں 17 افراد کی لاشیں نکالی گئی ہیں۔ ڈی سی کورنگی نے کہا کہ مزید کسی کے فیکٹری میں پھنسے ہونے کی اطلاع نہیں ہیں۔فائر بریگیڈ حکام کے مطابق فیکٹری میں مختلف اشیا بنانے میں استعمال ہونے والا کیمیکل موجود تھا، آگ کیمیکل کے ڈرم میں لگی، جو پھیلتی گئی۔
آگ کی شدت سے عمارت کے کچھ حصے گرنے لگے ہیں، فائر بریگیڈ کے مطابق امدادی کارروائی کے دوران 2 ریسکیو اہلکار زخمی ہوئے، ایک اہلکار فیکٹری کی دوسری منزل سے گر کر زخمی ہوا۔

پولیس حکام کے مطابق فیکٹری کی تمام کھڑکیاں گِرل لگاکر بند کی گئی تھیں، کمروں میں کھڑکیوں کے ساتھ سامان رکھ دیا گیا تھا تاکہ کوئی کھڑکی تک نہ آسکے، بظاہر ان اقدامات کا مقصد فیکٹری میں چوری کو روکنا معلوم ہوتا ہےجبکہ جاں بحق نوجوان کا باپ بیٹے کی لاش دیکھ کر دل کا دورہ پڑنے سے جاں بحق ہو گیا۔واقعے میں جاں بحق ہونے والے 22 سالہ نوجوان کاشف کے والد ذوالفقار واقعہ کی اطلاع ملنے پر جناح اسپتال پہنچے ، بیٹی کی لاش دیکھی تو انہیں دل کا دورہ پڑ گیا جس سے ان کی موت واقع ہو گئی۔
دوسری جانب وزیراعلی سندھ سید مراد علی شاہ نے کورنگی مہران ٹاؤن میں کیمیکل فیکٹری میں آتشزدگی کا نوٹس لے لیا۔سید مراد علی شاہ نے واقعے پر گہرے دکھ کا اظہار کیا اور کمشنر کراچی اور لیبر ڈپارٹمنٹ سے رپورٹ طلب کرلی۔ وزیراعلی نے کمشنر کراچی اور لیبر ڈپارٹمنٹ سے پوچھا کہ واقعہ کیسے پیش آیا اور حفاظتی تدابیر کیا تھیں، اتنا زیادہ جانی نقصان کیسے ہوا مراد علی شاہ نے جاں بحق مزدوروں کے خاندان کی بھرپور مدد کرنے اور زخمیوں کا علاج کرانے کی ہدایت دے دی۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button