بلاگز

ناہٹس کی تاریخ کیا ھے ۔ یہ کون تھے۔

صلیب کے لڑنے والوں کی دوسری لہر ابھری اس دفعہ حملہ آور ہونے والے صلیبی جنگجو نائٹس یعنی یورپ کے سردار تھے

انہوں نے یوروشلم پر طوفانی یلغار کی اور فلسطین کے ایک علاقے میں اپنی ریاست قائم کر لیں صلیبی پرچم کے ساتھ یہ پہلا کامیاب حملہ تھا جس نے نہ صرف ناقابل تسخیر مسلمانوں کے خلاف یورپیوں کو حوصلہ دیا بلکہ کشت و خون کا ایک نیا دور شروع کیا جو بات کی صدیوں میں جاری رہا اور ابھی تک جاری ہے۔
اس حملے کو صلیبی جہاد کہا گیا جس کا مطلب کافروں کے خلاف مقدس جنگ تھا اس حملے کو صلیبی جنگ یا مسیحی جہاد کہا گیا جس کا مطلب کافروں کے خلاف مقدس جنگ تھا اس اولین صلیبی جنگ کے پسے پردہ پائے جانے والے محرکات یا مفادات کیا تھے اس کے لیے نائٹس کی ان سرگرمیوں پر ایک نظر ڈالنا کافی رہے گا جو وہ یوروشلم آتے ہوئے سر انجام دے رہے تھے راستے میں وہ مسلمانوں یہودیوں اور سیاہ فام عیساہیوں کا قتل عام کرتے رہے ان الفاظ سے زیادہ بلند آہنگ ہوتے ہیں کیا یہ واقعی مقدس مذہبی جنگ تھی نہیں قطعی نہیں بلکہ یہ ایک نسلی معرکہ آرائی تھی۔
اپنی نوعیت کی معرکہ آرائی جو صلیبی جنگ کے نام پر وجود میں آئی اور یہ صلیبی جنگ آج بھی جاری ہیں جسے ہم ثابت کریں گے جیسے جیسے وقت گزرا صلیبی جنگوں کی تعداد اور مقدار میں اضافہ ہوتا گیا اسی طرح نائٹس کی تعداد اور حیثیت میں بھی اضافہ ہوتا گیا مختلف پس منظر اور ان کے نام اور خطبات بھی مختلف تھے جیسے ٹیوٹا نک نائٹ جرمن سردار۔سپینش نائٹس ہسپانوی سردار ۔ ہاسپٹلر نأہٹس۔ ٹمپلز ناہسٹ معبدی سردار۔

معرکہ آرائیوں اور ان گنت جانوں کے زیاں نے عیسای دنیا کو باور کرادیا کہ جب تک مسلمانوں میں امت کا تصور موجود ہے اور وہ شریعت پر کاربند ہیں تب تک وہ ناقابل تسخیر رہیں گے چنانچہ اپنے دشمن پر غالب آنے کے لئے عیسائیوں نے اپنی فتح کا تصور ہی تبدیل کر لیا میدان کارزار تبدیل ہوگئے اور حکمت عملی بھی شجاحت کی جگہ دھوکادہی نے لے لی اور تلوار کی جگہ سیاست نے۔
اور پھر اس عسیای بہت جلد اس قابل ہو گئے کہ یوروشلم کی ارض مقدس پر مسلمانوں کے ساتھ کسی جنگ کے بغیر قبضہ کر لیں اس مرحلے پر مسلم دنیا ایک طرف منگولوں کے خطرے کی زد میں تھی تو دوسری طرف عیسائیوں کے ساتھ محاذ رہی تھی صلاح الدین ایوبی کی اولاد نے ایک وقت میں ایک محاذ پر لڑنے کا فیصلہ کیا چنانچہ انہوں نے عیسائیوں کے ساتھ ایک معاہدہ کرلیا۔

اس معاہدے کے مطابق عیسائی بادشاہ یوروشلم پر حکومت کرے گا اور مسلمانوں کے جان اور مال کی حفاظت کا ذمہ دار ہوتا لیکن بہت جلد یہ شرائط بھلادی گئی مسلمانوں کو پہلے کی طرح اذیت دی جانے لگی اذانوں پر پابندی لگا دی یہ صورتحال زیادہ عرصہ تک برقرار نہ رہ سکی منگولوں کے ہاتھوں شکست کا سامنا کرنے والے مسلمان مشرق وسطی کے اس حصے میں جمع ہوگئے۔

اب مسلمان سلطان کو مسئلہ درپیش تھا کہ ان لوگوں کو کہاں آباد کیا جائے چنانچہ اس نے مسلمانوں کی شکست کے غم و غصہ کو استعمال کرنے کا فیصلہ کیا منگولوں سے ہر زیمت خوردہ لشکریوں کو یوروشلم کا قبضہ واپس لینے کی مہم پر مامور کر دیا گیا تندخو منگولوں کے ساتھ برسوں کی پنجہ آزمای کے تجربے نے ان کے لیے یہ مہم یک طرفہ بنا دی۔ یوروشلم ایک مرتبہ پھر مسلمانوں کے ہاتھوں میں تھا اس دفعہ یہ قبضہ بیسویں صدی تک برقرار رہا۔

مسلمانوں کے ہاتھوں یوروشلم کے بعد بارہ سو اکانوے میں عکہ بھی مسلمانوں کے آگے سرنگوں ہو گیا اور عکہ کے سکوت نے مقدس مسیحی سلطنت کی امیدیں ہمیشہ کے لئے ختم کر دیں مسیحی سلطنت کے لئے سرکردہ نائٹس اب بے مصرف اور بے مقصد ہوگئے تھے تاہم اتنے بے مصرف بھی نہیں ہوئے تھے ۔

صلیبی محاربات ختم ہوجانے پر نائٹس کے گروہ مختلف سمتوں میں روانہ ہوگئے ٹیو ٹا نک نائٹس نے بالٹک کی ریاستوں کو اپنی منزل بنا لیا وہاں بے دین قبائلیوں کو نیست نابود کرکے ایک مسیحی فرمانوای قاہم کی جو پرشیا لٹویا اور اسٹونیا پر مشتمل اور خلیج پھیلی ہوئی تھی سپینش ناہٹس مورو سے مسلمانوں کو بے دخل کرنے کے لیے روانہ ہوگئے۔

مسافرنواز یعنی ہاسپٹلر نائٹس نے رہوڈز میں سرداریاں قائم کرنے کا فیصلہ کیا لیکن پھر مالٹا کو اپنی منزل بنا لیا وہاں نائٹس آف مالٹا کی حیثیت سے انہوں نے تین صدیوں سے زیادہ عرصہ تک بحر روم کے علاقے میں اپنا کنٹرول برقرار رکھا اور تجارت اپنے قبضہ میں لے لیں آج کل وہ نائٹس آف سینٹ جان کے نام سے کام کر رہے ہیں۔

ٹیمپلز نائٹس ایک ایسا گروہ تھا جس کے سامنے بظاہر کوئی مقصد اور کوئی نسب العین نہیں تھا وہ ہر منظر سے غائب ہو گئے لیکن زیر زمین پوری طرح موجود تھے ان کے سامنے اب بڑا نصب العین اور بڑا ایجنڈا تھا جس پر وہ دیگر نائٹس کو بلا واسطہ انعقاد سے کام کرنے لگے ان کی نظروں میں پوری دنیا اور عظیم ترین فرمانروائی تھی ان کی حکمت عملی سمجھنے کے لیے ہمیں ان کی بنیاد پر نظرثانی کرنی ہوگی

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button