کاروبار

پاکستان اور آئی ایم ایف کے درمیان قرض کے لئے مذاکرات پھر ناکام ہوگئے

آئی ایم ایف اور پاکستان ایک بار پھر فریم ورک پر اختلافات معیشت کے مستقبل کہ دوڑ میںپ پر صورتحال مناسب نہ ہونے کی وجہ سے مقررہ وقت پر اسٹاف سطع محاہدے تک پہنچنے میں ناکام رہے۔

ڈالر کی ایک ارب قسط جاری کرنے اور بہتر معاشی صورتحال کا سرٹیفکیٹ حاصل کرنے کے لیے چار سے 15 اکبوتر تک مذاکرات کا دور بے نتیجہ رہا۔ جبکہ پاکستان کی جانب سے بجلی اور پٹرولیم کی قیمتوں میں اضافے کی شرط قبول کیے جانے کے باوجود مذاکرات ناکام ہوگئے۔ لیکن فریقین نے مذاکرات جاری رکھنے کا عزم ظاہر کیا ہے۔ کہ مذاکرات کے مثبت خاتمے کے لیے وزیر خزانہ شوکت ترین نے آئی ایم ایف کے مینجنگ ڈائریکٹر کرسٹلینا جارجیوا ۔ اور امریکی معاون وزیر خارجہ برائے جنوبی اور وسطی ایشیا ڈونلڈلو سے الگ الگ ملاقاتیں کیں۔
لیکن ایسا لگتا ہے۔ کہ یہ دونوں ملاقاتیں بھی مثبت ثابت نہ ہوئی۔ آئی ایم ایف کی ٹیم پاکستانی وفد کے ساتھ مذاکرات میں ہمارے ایجنڈے کو آگے بڑھانے میں مصروف کار ہیں۔ یہ کہنا ہے آئی ایم ایف سے سکبدوش ہونے والے نمائندے ٹریسا ڈابن سانچیز کا انہوں نے یہ بھی بتایا۔ کہ ہم پاکستانی احکام کے ساتھ پالیسیوں اور اصلاحات پر مذاکرات کے تسلسل کے منتظر ہیں ۔جو چھٹی جائزے کی تکمیل کی بنیاد بن سکتے ہیں۔
یہ دوسری بار ہوا ہے ۔ کہ پاکستان اور آئی ایم ایف چھٹے جائزے کے تکمیل کی بنیاد تک نہیں پہنچ سکے۔ جون کے اندر بھی یہ کوشش بے سود رہی۔ آئی ایم ایف اور پاکستان اب تک معاشی اور مالیاتی پالیسیوں کی یادداشت ایم ای ایف پی۔ پر متفق ہونے پر ناکام رہے ہیں۔ جو بیل آوٹ پروگرام کی بنیاد بنتا ھے۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button