بلاگز

پسند کی شادی یا معاشرے کی ہاتھوں قتل کی سازش؟

نکاح خواں نے پوچھا  "آپکو نکاح قبول ہے؟ "

اسے یاد آئی باپ کی بات "میں اپنے خاندان کو کیا منہ دیکھاؤں گا اگر ہاں نہ کی تو اپنے باپ کے جنازے پہ بھی نہ آنا” اس نے جواب دیا "قبول ہے”

 پھر پوچھا گیا "بیٹاآپکو یہ نکاح قبول ہے ؟” قریب ہی بھائی کی بازگشت سنائی دی "میں لوگوں سے نظریں کیسے ملا سکوں گا ، پسند کی شادی کا سوچا 

بھی تو ہمارے لیئے تم مر گئیں “ پھر جواب میں کہا گیا "قبول ہے” 

نکاح خواں نے تیسری دفع سوال کیا “کیا آپکو یہ نکاح قبول ہے؟” اسکو ماں کی

 دھمکی یاد آئی “اگر تم نےہماری مرضی کے خلاف پسند کی شادی کی میں نیند کی گولیاں کھا کے خودکشی کر لوں گی” تیسری بار اس نے جواب دیا “ جی قبول ہے“ 

 

وہ رخصت ہو کے خاندان ،معاشرے اور لوگ کیا کہیں گے اس ڈر سے ان چاہے بندھن میں بندھ کر دولہا کے گھر آگئی اپنے کمرے میں دولہا کا انتظار کرتے خود سے کئی عہد 

کیئے کہ ابیہ رشتہ پوری ایمانداری سے نبھانا ہے ۔ باہر سے مردوں کے قہقہوں کی اور گھٹیا بازادی موسیقی کی گونج کانوں میں پڑی تو جھانک کےباہر دیکھا ، کئی مرد ہال میں دولہا کے ساتھ بیٹھے غالباً تاش کھیل رہے تھے یا پھر جوّا ؛ ساتھ شراب اور بیہودہ ہنسی مذاق جاری تھا وہڈر گئی تب ہی دروازہ دھاڑ کی آواز سے کھلا 

دولہا کمرے میں داخل ہوا اور اسکا سارا زیور نوچ کے لے گیا۔ وہ بےآواز رو دی اپنیقسمت پہ ۔ روتے روتے آنکھ لگ گئی آذان کی آواز کے ساتھ آنکھ کُھلی تو لباس تبدیل کرکے نماز ادا کی اللّٰہ سے ہمت مانگی سلامپھیر کے کھڑی ہوئی تو دولہا نشۓ میں دھت کمرے میں داخل ہوا دولہن کو سادا لباس میں دیکھ کے تھپّڑ 

مارا کہ میری اجازت کے بناءلباس کیوں تبدیل کیا اور پھر ایک تھپر پر ہی بس نہیں کیا  وہ روتی رہی سسکتی رہی اور وہ اس کو اپنی 

حوس اور بربریت کا نشانہ بناتا رہا۔

 

اجالا ہوا گھر والے ناشتہ لے کے آئے وہ گڑگرائی رات کے جوئے شراب کی داستان سنائی ساتھ لے جانے کی فریاد کی باپ اوربھائی منہ پھیر کے چلے گئے ماں نے کہا لوگ کیا کہیں گے ایک رات کی دلہن گھر آکر بیٹھ گئی تمہاری چھوٹی بہن کی کہیں شادینہیں ہوگی اب جو بھی ہے تمہارا نصیب تمہارا جنازہ ہی اب اس گھر سے آئے گا۔ ماں چلی گئی اور وہ بلک بلک کے رو دی۔

 

رات ولیمہ کی تقریب ہوئی دولہا کے سارے عیاش و اوباش دوست دلہن کے حسن کے گن گاتے رہے اور 

دولہا فخر سے داد وتحسین وصول کرتا رہا ۔ مہمان چلے گئے دولہا نے حکم دیا جب تک میں نہ کہوں لباس تبدیل نہ کرنا وہ چلا گیا باہر پھر کل رات کیکہانی دوہرائی جا رہی تھی اور اندر وہ بیچاری دولہا کا اجازت کا انتظار کر رہی تھی آدھی رات گزری تو کمرے میں انجان شخص داخلہوا اسکے شور کرنے سے پہلے ہی 

منہ پہ ہاتھ رکھ کے اسکی چیخ کا گلا گھونٹ دیا گیا ایک کے بعد ایک ،چار مردوں نے اسے اپنی درندگی 

کانشانہ بنایا آخر میں آنے والا اسکا شوہر تھا اسکی عزت کا امین جس نے اسے جوّے میں ہار دیا تھا جاتے 

ہوئے کہتا گیا سامان باندھ لوتمہیں شیخ صاحب کے ساتھ ایک ہفتے کیلئے جانا ہے پسند آگئی ہو تم انہیں ۔

وہ موت کا پروانہ تھما کے چلا گیا وہ زخمی روح کے ساتھ زخمی جسم کو گھسیٹتی میز تک آئی پھلوں کی 

ٹوکری سے چھری اٹھائی اوراپنی جان لے لی شریف خون تھا ذلت کی زندگی کے خیال سے ہی موت کو گلے لگا لیا۔ 

دولہا کمرے میں آیا دلہن کی ساکت لاش دیکھ کے گھبرا گیا باہر آکر بتایا سب یار دوست بھاگ گئے شیخ 

صاحب سمیت جو کچھ دیرپہلے دلہن پہ فریفتہ تھے اسکی لاش کو ٹھوکر مار کے فرمایا جلدی جان چھڑواؤ 

اس مصیبت سے۔ دولہا نے دولہن کے گھر والوں کوفون ملایا اور خوب لعنت ملامت کی کہ جب بیٹی شادی کیلئے راضی نہ تھی تو کیوں کی شادی ؟ خودکشی کرلی ہے آپکی بیٹی نے ۔ لاشاٹھا کے لے جائیں ورنہ ایدھی میں پہنچا دونگا لاوارث کہہ کے۔

 

شریف،مجبوراور بےبس باپ نے خاموشی سے بیٹی کی لاش اٹھا کے دفنا دی نہ پورسٹ مارٹم ہوا نہ ہی زیادتی کا کیس بنا.

شریف اور غریب ماں باپنے باقی بچوں کی شادیوں اور محلے اور رشتہ داروں کے خوف سے زبانیں سی لیں۔

 

یہ ہمارے معاشرے کی تلخ حقیقتوں میں سے ایک حقیقت ہے ایک مظلوم خاندان صرف سماج کے خوف سے لوگوں کےبےرحمانہ تجزیے سے ، رشتہ داروں کی سفاکانہ الزام تراشیوں سے بچنے کی خاطر اپنی اولاد  کے لیئے انصاف کا تقاضہ نہیں کر پاتے ۔اگر کوئی بھولا بھٹکا یہ ہمت کر بھی لے تو ہمارے قانون نافذ 

کرنے والے ادارے ان کا جینا حرام کر دیتے ہیں ۔ ہماری عدالتوںمیں انصاف کی فراہمی کے بجائے مجرم کو ہر طرح کی ڈھیل دی جاتی ہے چار دن سوشل میڈیا پہ واویلا کیا جاتا ہے اگر کیس میںزیادہ سنسنی ہو تو

ٹی وی چینلز پہ ٹاک شوز کی ٹی آر پیز بڑھانے کیلئے  ایک دو شوز بھی کر لیئے جاتے ہیں پھر کچھ دن 

کمائی کے بعد میڈیاوالے کسی نئی خبر کی طرف متوجہ ہو جاتے ہیں اور وہ مظلوم خاندان انصاف کی راہ 

دیکھتا رہ جاتا ہے۔ انکی کوئی داد رسی نہیں کیجاتی ۔ عدالتوں میں اسی خاندان پہ کیچڑ اچھالا جاتا ہے اتنا گند کہ شریف انسان تو کھڑے کھڑے مر جائے لیکن اس سب کے بعدبھی انصاف کی فراہمی نہیں ہو پاتی اور بروقت فراہمی تو پاکستان میں ایک خواب ہی ٹھہرا۔

 

 

میں حکومت وقت سے درخواست کرتی ہوں کہ عدالتوں کے نظام کو بہتر بنانے پہ توجہ دی جائے بروقت اور منصفانہ فیصلوں کیفراہمی کو یقینی بنایا جائے تاکہ عوام کا پاکستان کی عدالتوں اور قانون نافذ کرنے والے 

اداروں پہ اعتماد بحال ہو سکے۔ غریب امیر کیتفریق کے بغیر سب سے یکساں طور پہ برتاؤ کیا جائے ۔

رشوت گردی اور سفارشی کلچر کا قلع قمع کیا جائے ۔ پاکستان جیسے ملک کو فیالحال اپنے محکمہ صحت ، محکمہ تعلیم کے ساتھ ساتھ عدالتی نظام میں نمایاں بہتری کی ضرورت ہے برائے مہربانی اس پہ پہلی فرصتمیں توجہ دیجیئے  اس سے پہلے کے ایسے لوگوں کے ہاتھ آپکی اولادوں تک پہنچ جائیں کیونکہ بیٹیاں تو 

سانجھی ہوتی ہیں ، سوچیئے گا ضرور۔

تحریر : حیأ انبساط

اردو گلوبلی

اردو گلوبلی پاکستانی اردو نیوز ویب سائٹ ہے جہاں آپ کو ہر خبر تک بروقت رسائی ملے گی۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button