بلاگز

وہم کی بیماری کیا۔ وہم کسے کہتے ہیں

وہم کی امراض کی کیا وجوہات ھے۔ اس کی علامات کیا ھے۔ وجوہات کیا ھے

نفسیاتی تجزیے کا کافی حد تک جہاں انزائٹی ڈپریشن کے مریض ہوتے ہیں۔ وہاں پر ان کو یہ بتانا ہوتا ہے۔ کہ اس وجہ سے یہ ہورہا ہے۔ یہ جو Obesvssive compulsive ہوتا ہے .اس میں کئی دفعہ وہچیزیں نہیں بھی بتانی ہوتی ہوتی۔ لیکن ایک تھراسپٹ کا اس کو سمجھنا بہت ضروری ہے۔

لیکن جب ہم اس کے علاج کی طرف آتے ہیں۔ تو یہ بدقسمتی سے obsevssive compulsive disorde ہے ۔ کہ جس میں سب سے زیادہ وقت لگتا ہے ۔ او سی ڈی۔ کا علاج لمبا ہے ۔اس طرح سے کہ جو علامات ٹھیک ہونے میں وقت لگتا ہے۔ اب جیسے انزائٹی اور ڈپریشن والے مریض کو آپ نے میڈیسن دی ہے ۔ اس سے وہ بہتر ہو سکتا ہے ۔ لیکن OCD وال مریض وہ تھوڑا سا وقت لگاتا ہے۔ اس میں اسے سمجھانے کی ضرورت ہوتی ہے۔ کہ دیکھیں اسے وہم آتے ہیں۔ اور وہم آنے کی وجہ سے اس کے ذہن میں گھبراہٹ پیدا ہوتی ہے ۔اس کو دور کرنے کے لئے مریض compusive ایکٹ کرتا ھے۔

یعنی کہ جیسٕ میرے ہاتھ نہ پا ک ہیں۔ انزائٹی ہوئی۔ اس کو دور کرنے کے لئے پھر اس نے بار بار ہاتھ دھوئیں۔ یا اسے یہ ہوا ۔ کہ میں نے جو دروازے کی کنڈی کو چار سے دس دفعہ بند کرنا ہے ۔فلاں کلمہ پڑھوں گا ۔ تو یہ جو میرے ذہن میں خیال آ رہے ہیں ۔گناہ کر دیا ہے۔ تو گناہ کا اثر کم ہو گا ۔ یا اس مختلف حرکات پر عمل کرتا ہے۔

اب جو سوچ ہے ۔ وہ انسان کے کنٹرول میں نہیں ہے۔ جب انسان کے کنٹرول میں نہیں ہے۔ تو ہم میڈیسن سے اسے کنٹرول میں نہیں کر سکتے۔ میڈیسن سے کسی کو ہم اچھا یا برا نہیں بنا سکتے ۔ نہ ہی کسی کو تمیز دار یا بدتمیز بنا سکتے ہیں۔ اسی طرح سے ہمارے بس میں ہے عمل ۔اور عمل جو اس مریض کے بس میں نہیں آرہا۔ اس کی وجہ کیا ہوتی ہے ۔ وہ انزائٹی ہوتی ہے۔ جو ہم اس کے اندر پیدا کرتے ہیں۔ تو ہم جو علاج دیتے ہیں۔ وہ اس انزاٹی کے اوپر ہوتا ہے ۔ یعنی وہم کو دور کرنا ہے۔ جو وہم کی وجہ سے بن رہی ہے ۔ اور وہم مریض کو آرہا ھے۔

تو وہ انزائٹی جب کم ہو جائے گی ۔ تو مریض کے اندر ایک ہمت حوصلہ پیدا ہو گا ۔ اور وہ یہ ایکٹ نہیں کرے گا ۔ اور وہ اس ایکشن جس کو ہم کمپلس ایکٹ کرتا ھے۔ انزائٹی کو دور کرنے کے لئے۔ جب ہم وہ انزائٹی میڈیسن سے دور کریں گے۔ تو اسے وہ ایکٹ کرنے کی ضرورت ہی نہیں ہو گی ۔ تو جو اسے وہم آرہے ہیں ۔ اور وہم کا جو پریشر ہے۔ وہ کم ہو جائے گا ۔اور آہستہ آہستہ اور obsevission کے غبارے میں سے ہوا نکلتی جائے گی۔ اور وہ ختم ہوتے چلے جائیں گے۔

ایک عام سی مثال مریضوں کے لیے پیش کرتا ہوں۔ کہ اگر آپ کے دروازے کے باہر کوئی ناک کرتا ہے ۔ آپ نہیں جاتے۔ وہ دو سے تین دفعہ دوبارہگھنٹی بجائے گا۔ چوتھی دفعہ وہ چلا جاتا ہے۔ کہ بھائی گھر میں کوئی نہیں ہے ۔ تو ایسے ہی جب وہم آئیں گے۔ آپ انزاٹی میں نہیں آئیں گے ۔ آپ compulsive ایکٹ نہیں کریں گے۔ ایک دفعہ دو دفعہ وہم آ کر وہ سمجھے گا۔ کہ کچھ نہیں ہورہا ۔ وہ آہستہ آہستہ اس کی شدت کم ہوتی جائے گی ۔ پھر اس کے بعد مریض اس حالت سے باھر نکل آے گا۔

اور زیادہ مریضوں میں اسی طرح سے ہوتا ہے ۔ جب وہ دوائی شروع کرتے ہیں۔ پندرہ سے بیس دن بعد مریض آتا ہے ۔ کہ اس کے گھر والے بتاتے ہیں ۔ کہ اب یہ کم نہاتی ہے۔ پہلے سے مریض کا رویہ بہتر ہو رہا ہے۔خود بھی مریض سمجھتا ہے۔ کہ ہاں یہ ٹھیک ہے ۔ کرتے کرتے دو ماہ کے اندر مریض سرکل سے باہر آنا شروع ہو جاتا ہے۔ چار سے پانچ ماہ مریض کافی حد تک بہتر ہو جاتا ہے۔ لیکن یہ یاد رکھیں۔ کہ ہر مریض کا ۔ہر انسان کا ۔جب اس کے اوپر انزائٹی آتی ہے ۔ڈپریشن آتا ہے۔ سٹیریں آتا ہے ۔ ذہنی دباؤ تو وہ ایک پیٹرن ہوتا ہے۔ری ایکشن کا۔

جن مریضوں کو ایک دفعہ OCD ہو جاتا ہے۔ ان کا سٹریس پیٹرن بن جاتا ہے۔ کہ جب بھی ان کے اوپر کوئی ذہنی دباؤ آئے گا۔ جیسے امتحان۔ شادی ۔جاب کا مسئلہ ۔بچے کی پیدائش۔ اور گھر میں کوئی ایشو کسی بھی قسم کا ۔ اسکے لئے بار بار یہ چیز اس میں آسکتی ہے۔ مشکل بیماری ہے قابو کرنے کے لیے۔ لیکن ناقابل علاج ہرگز نہیں ہے ۔ ڈاکٹر اور مریض کے تعلقات ۔ میڈیسن سے۔ اور مریض کی ہمت کی وجہ سے ۔ اس بیماری سے نجات پائی جا سکتی ہے

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button